جمہوریت کے رد پر غیرمقلد(اہلحدیث) علماء کے اقوال

 

اہل حدیث ، غیر مقلد علماء کا جمہوریت پر رد

 

 

مشہورعالم دین مولانا عبد الرحمان کیلانی فرماتےہیں

’’مغربی جمہوریت میں پانچ ارکان ایسے ہیں جوشرعاًناجائزہیں :

خواتین سمیت تمام بالغوں کا حق رائے دہی(بالفاظ دیگر:سیاسی اورجنسی مساوات)

ہرایک کے ووٹ کی یکساں قیمت

درخواست برائے نمائندگی اور اس کے جملہ لوازمات

سیاسی پارٹیوں کا وجود

کثرتِ رائے سے فیصلہ

ان ارکانِ خمسہ میں سے ایک رکن بھی حذف کردیا جائے،توجمہوریت کی گاڑی ایک قدم بھی آگےنہیں چل سکتی ہے۔

جبکہ اسلامی نظام خلافت میں ان ارکان میں سے کسی ’’ایک‘‘کو بھی گوارہ نہیں کیا جاسکتاہے۔لہٰذایہ دونوں نظام ایک دوسرے کی ضد ہیں اور ایک دوسرے سےمتصادم ہیں ۔یعنی نہ تو جمہوریت کو ’’مشرف بہ اسلام ‘‘کیا جاسکتا ہے اور نہ ہی نظام خلافت میں جمہوریت کے مروجہ اصول شامل کرکےاسکے سادہ ،فطری اور آسان طریق کار کوخواہ مخواہ ’’مکدر اور مبہم‘‘بنایاجاسکتاہے۔وجہ یہ ہے کہ جمہوریت ایک لادینی نظام ہے اور اس کے علمبردار مذہب سےبیزارتھے۔جبکہ خلافت کی بنیاد ہی اللہ ،اس کےرسول صلی اللہ علیہ وسلم اور آخرت کےتصورپر ہے اور اس کے اپنانے والے انتہائی متقی اور بلند اخلاق تھے۔

 

ہمارےخیال میں جیسے دن اور رات یا اندھیرے اور روشنی میں سمجھوتہ ناممکن ہے،بالکل ایسےہی دین اور لادینی یا خلافت یا جمہوریت میں بھی مفاہمت کی بات ناممکن ہے۔لہٰذا اگرجمہوریت (یا اس کے اصولوں )کو بہرحال اختیارکرنا ہے تو اسےتوحید و رسالت سے انکارکے بعد ہی اپنایا جاسکتا ہے۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

شیخ امین اللہ پشاوری  اپنی کتاب میں فرماتےہیں

 

’’جمہوری انتخابات اور حکومت و عہدے کی طلب بھی بہت بڑا فتنہ ہےاور اللہ کی قسم!یہ عظیم فتنہ ’’کفر باللہ اور کفر بالاسلام ‘‘پر مشتمل ہےاوراپنے اندر تمام کبائر اورگناہوں کو سمیٹے ہوئے ہے ۔ جو شخص اس بات کو نہیں سمجھتا اسے چاہیے کہ موجودہ دل کی جگہ دوسرا دل ،موجودہ عقل کی بجائے دوسری عقل اور موجودہ ایمان کے بدلے اور ایمان اللہ سے مانگے‘‘۔

(الفوائد،انتخابات کا فتنہ،ص43)

 

شریعت اسلامیہ میں کوئی ایسی چیز نہیں جس کو انتخابات کے نام سے موسوم کیا گیا هو ،جمہوریت کا راستہ سراسر طاغوتی راستہ هے اور الله کے دین سے کوسوں دور هے . نه صرف یه که جمہوریت اس دنیا میں تمام مذاہب اور نظاموں سے بدترین اور خطرناک نظام ہے بلکه یه "اُم الکفر" ، کفر کی جڑ هے . (فتاوی دین الخالص)

 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پروفیسرحافظ عبدالله بہاولپوری "جمہوریت اسلامی کیسے ؟" میں کہتے هیں

 

  حقیقت یہ ہے کہ جمہوریت نہ کل اسلام ہے نہ اسلام کا جز۔ بلکہ اسلام کاغیر اور اس کی ضد ہے کیونکہ اسلام ایک دین ہے اور جمہوریت لادینیت ہے ۔جمہوریت   چاہتی ہے کہ اللہ کا کوئی تصور نہ ہو، حاکمیت عوام کی ہو۔ اسلام چاہتا ہے کہ حاکمیت اللہ کی ہو، اللہ کے سواکسی کی نہ چلے اگر کوئی کہے کہ جمہوریت کا یہ تصور تو مغرب کا تصور ہے، اسلامی جمہوریت کا یہ تصور نہیں تو اس سے کہا جاسکتا ہے،کہ جب  جمہوریت کوئی اسلامی چیز ہی نہیں   تو اس کا کوئی اسلامی تصور  کیسے ہوسکتا ہے ، جمہوریت مغرب کا نظام ہے اور مغرب کا تصور ہی اس کا اصل تصور ہے۔ رہ گیا  آج کل کے مسلمانوں کا جمہوریت  کو اسلامی کہنا تو ان کے کہنے سے  جمہوریت اسلامی نہیں   ہوسکتی ۔ کفر کو کوئی کتنا بھی اسلامی کہے کفر اسلام نہیں ہوتا ، کفر تو کفر هی رہتا هے ، کافر مسلمان هو جائے تو هو جائے ، کفر کبهی اسلام نہیں هوتا۔

 

  جمہوریت ایک مستقل نظام ہے ، جس کی داغ بیل موجود  شکل وصورت میں انقلاب فرانس کے بعد پڑی ، یہ مغرب کا نظام ہے اس کو اسلام میں تلاش کرنا یا اسلام میں داخل   کرکے اسےاسلامی   کہنا اسلام سے بے خبری کی دلیل ہے ۔ا سلام ایک جامع اور مکمل   نظام حیات ہے اس کے تمام نظام اپنے ہیں ۔ا س کو باہر سے کوئی نظام امپورٹ کرنے کی ضرورت نہیں۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

)